Home / پاکستان / بڑے بڑے مافیا بیٹھے ہوئے ہیں، قانون کی بالادستی قائم نہیں ہونے دیتے ،جب تک ہم سچے، امانت دار انصاف کرنے والے نہیں ہوں گے، عظیم قوم نہیں بن سکتے، وزیر اعظم عمران خان

بڑے بڑے مافیا بیٹھے ہوئے ہیں، قانون کی بالادستی قائم نہیں ہونے دیتے ،جب تک ہم سچے، امانت دار انصاف کرنے والے نہیں ہوں گے، عظیم قوم نہیں بن سکتے، وزیر اعظم عمران خان

Sharing is caring!

ڈیرہ اسماعیل خان (این این آئی)وزیراعظم عمران خان نے کہا ہے کہ جب تک ہم سچے، امانت دار اور انصاف کرنے والے نہیں بنیں گے ہماری قوم عظیم قوم نہیں بن سکے گی،ناانصافی کا نظام پاکستان میں ہے، بڑے بڑے مافیا بیٹھے ہوئے ہیں، قانون سے بالاتر ہیں، قانون کی بالادستی قائم نہیں ہونے دیتے ،آج سسٹم اور ان مافیاز کے خلاف جو جنگ ہم لڑ رہے ہیں اس میں کامیاب ہوں گے ، ہمیں اپنے آبی ذخائر اور پانی کے بہتر استعمال کی منصوبہ بندی کرنی ہوگی، ہمیں ایک خوددار قوم بننا چاہیے۔ جمعرات کو یہاں کسان کارڈ کے اجرا

کے سلسلے میں منعقدہ تقریب سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ اس لیے میں پاکستانیوں کو یہ سمجھاتا ہوں کہ اللہ نے پاکستان کو کسی چیز کی کمی نہیں دی، یہاں اس نے ہر قسم کی نعمتیں دی ہیں تاہم ہمیں ایک عظییم قوم بننے کے لیے سچائی اور کردار چاہیے۔وزیراعظم نے کہا کہ میں نے ساری دنیا دیکھی ہوئی ہے جن لوگوں کو ہم کافر کہتے ہیں آپ حیران ہوں گے وہاں کوئی دیکھنے والا نہیں ہوتا لیکن لوگ پیسے ڈال کر اخبار اٹھاتے ہیں جو ویسے ہی رکھے ہوتے ہیں، وہاں سوچتے بھی نہیں کہ انتخابات میں دھاندلی ہوگی۔انہوںنے کہاکہ وہاں لوگ آتے ہیں سیدھا ووٹ ڈال کر چلے جاتے ہیں،

کوئی پوچھنے والا بھی نہیں ہوتا، ہمارے انتخابات سے پہلے ہم گھنٹوں اس بات پر میٹنگ نہیں کرتے کہ ووٹرز کو کیسے نکالنا ہے بلکہ اس پر بات ہوتی ہے کہ دھاندلی کس طرح روکنی ہے۔انہوں نے کہا کہ ہمارے لیے بہت بدقسمتی کی بات ہے کہ ہمارے ہاں ایسے لوگ آئے جو آج اربوں روپے کے اثاثے لے کر باہر بیٹھے ہوئے ہیں، ایک رسید نہیں بتاسکتے کہ یہ پیسہ کہاں سے آیا اور وہاں سے بیٹھ کر یہاں تقریریں کررہے ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ ہمیں ایک عظیم قوم بننا تھا، آج سسٹم اور ان مافیاز کے خلاف جو جنگ ہم لڑ رہے ہیں اس میں کامیاب ہوں گے اور قوم نے اپنے آپکو تبدیل کرنا ہے۔

انہوں نے کہا کہ جب پاکستان قائم ہوا تو ہماری آبادی 4 کروڑ سے بھی کم تھی جو آج 22 کروڑ تک پہنچ چکی ہے اور جس شرح سے بڑھ رہی ہے، اتنی زرخیز زمین کے باوجود ہم نے گزشتہ برس 40 لاکھ ٹن گندم درآمد کی۔انہوں نے کہاکہ اس مرتبہ پاکستان میں گندم کی تاریخ کی سب سے بڑی پیداوار ہوئی اس کے باوجود ہمیں درآمد کرنی پڑے گی کیوں کہ ہماری اتنی تیزی ئے بڑھ رہی ہے، ہم دالیں، گھی سمیت بیشتر اشیائے خورونوش درآمد کرتے ہیں اس لیے جب بین الاقوامی سطح پر قیمتیں بڑھیں تو یہاں بھی مہنگائی ہوگئی۔انہوں نے کہا کہ 2 چیزوں سے آبادی کی رفتار تھمتی ہے ایک بنیادی تعلیم کی فراہمی اور بنیادی صحت کے نظام کو ٹھیک کرنا جس پر ہم کام کررہے ہیں

لیکن ساتھ ہی ہمیں یہ منصوبہ بندی بھی کرنی ہے کہ بڑھتی ہوئی آبادی کے باعث کس طرح سب کا پیٹ پالنا ہے۔انہوںنے کہاکہ اگر اسی طرح آبادی بڑھتی رہی اور پیداوار کی شرح یہی رہی تو آئندہ برسوں میں پاکستان میں بہت بھوک ہوگی، اگر ہم خود اناج اگائیں گے تو عالمی سطح پر قیمتیں بڑھنے سے خاص فرق نہیں پڑے گا لیکن آج ہم درآمد کررہے ہیں تو اس کا اثر ہم پر پڑ رہا ہے۔انہوں نے کہا کہ ہمیں اپنے آبی ذخائر اور پانی کے بہتر استعمال کی منصوبہ بندی کرنی ہوگی، تاکہ ہم اپنے زمین سے زیادہ پیداوار کرسکیں ساتھ ہی زرعی تحقیق اہم چیز ہیں۔

انہوںنے کہاکہ بھارتی کی زرعی پیداوار ہم سے زیادہ ہے کیوں کہ وہاں تحقیق زیادہ ہوئی، اس لیے اب ہمیں زرعی پیداوار بڑھانے کے لیے پانی کے بہتر استعمال، زمین کا بہتر استعمال اور بیج کو تقری دینے جیسے معاملات پر کام کررہے ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ میں تاریخ کا طالبعلم ہوں میں نے دنیا کی تاریخ پڑھی ہے اور سب سے زیادہ متاثر نبی ؐکی سیرت سے ہوا۔انہوں نے کہا کہ میں ریاست مدینہ کی بات اس لیے کرتا ہوں کہ یہ دنیا کی تاریخ میں ایک بہت بڑا انقلاب تھا، اس سے پہلے اتنا بڑا انقلاب کبھی نہیں آیا۔انہوںنے کہاکہ ہمارے نبی ؐ واحد پیغمبر ہیں جن کی ساری زندگی تاریخ کا حصہ ہے،

کس طرح وہ لوگ جن کی کوئی حیثیت نہیں تھی یعنی عرب چند برسوں میں دنیا کی امامت کرنے لگے، یہ تاریخ کا حصہ ہے۔انہوں نے کہا کہ ہمارے حالات اس لیے برے ہیں کیوں کہ دین کا ہماری زندگی پر کوئی اثر نہیں ہوتا، ہم صرف جمعے کا خطبہ سن کر آجاتے ہیں، اللہ نے ہمیں قرآن میں حکم دیا ہے کہ ان کی زندگی سے سیکھو، اگر قرآن کی تعلیمات پر چلتے ہیں تو اس میں ہماری بہتری ہے۔وزیراعظم نے کہا کہ جب کوئی نبی کی سنت اور شریعت پر عمل کرتا ہے تو چھوٹا آدمی بڑا آدمی بن جاتا ہے، نماز میں ہم دعا مانگتے ہیں کہ اللہ ہمیں اس راستے پر چلا جن کو تو نے نعمتیں بخشیں، تو سب سے زیادہ نعمتیں تو رب نے اپنے حبیب کو بخشی تھیں۔

انہوں نے کہاکہ ہمیں ایک خوددار قوم بننا چاہیے، لاالٰہ الااللہ ایک انسان کو غیرت دیتا ہے، جب آپ اللہ کے سوا کسی کے سامنے نہیں جھکتے تو ایک چھوٹا سا انسان غیر مند ہوجاتا ہے، جب کوئی پیسے والے کے سامنے جھکتاہے تو کوئی اس کی عزت نہیں کرتا تاہم اگر ایک مزدور بھی غیرت مند ہوتا ہے تو لوگ اس کی عزت کرتے ہیں۔وزیراعظم نے کہا کہ مدینے کے انقلاب کی بنیاد 2 چیزیں تھیں ایک انسانوں کو آزاد کیا، عدل و انصاف کا نظام لے کر آئے، حضرت علی کرم اللہ وجہہ الکریم کے قوم کے مطابق کفر کا نظام چل سکتا ہے لیکن ظلم کا نظام نہیں چل سکتا۔انہوں نے کہا کہ ناانصافی کا نظام پاکستان میں ہے، بڑے بڑے مافیا بیٹھے ہوئے ہیں، قانون سے بالاتر ہیں، قانون کی بالادستی قائم نہیں ہونے دیتے کیوں کہ وہ کرپٹ نظام سے فائدہ اٹھا رہے ہیں،

اس لیے جب بڑے بڑے مافیا کہیں گے کہ ہمیں این آر او دے دو اور باقی غریبوں کو پکڑو تو ملک آگے نہیں بڑھ سکتا۔وزیراعظم نے کہا کہ نبی ؐ نے مدینہ میں سب سے پہلے انصاف قائم کیا کہ میری بیٹی بھی اگر جرم کرے گی تو اسے سزا ملے گی اور تم سے پہلے بہت سے قومیں اس لیے تباہ ہوئیں کیوں کہ ان میں انصاف نہیں تھا، جہاں طاقتور اور کمزور کے لیے علیحدہ علیحدہ قانون تھا۔انہوںنے کہاکہ ریاست مدینہ میں دوسری چیز انسان کا کردار بلند کرنا تھا، صادق اور امین جیسے کردار سے وہ لوگ اٹھے، کبھی بھی جھوٹے اور بزدل لوگ بڑی قوم نہیں بنا سکتے، سچے، دلیر اور غیرت مند لوگ ہی بڑی قوم بنا سکتے ہیں۔

About admin

Check Also

25+ Times People Thought Of Stupid Solutions That Actually Work

The only limit to accomplishing anything in life is your imagination. However, creativity and inventions …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *